Original Articles

Wajibulqatl Ahmedis killed in Lahore, what is the fuss about? – by Saad Mansoor

At least ninety five people killed and hundreds wounded but what I failed to understand was that what was the fuss about? My family and friends were truly horrified, in fact saddened, disgusted and many other things, but I remain confused, why?! Were not those who died Ahmedis? Correction; Qadiyanis? Were those not Ahmedi Mosques? Correction: Qadiyani places of worship? Didn’t the maulvi sahab say these people were wajib-ul-qatl?


Not long ago I was in a debate with someone at my workplace who advocated how and why ahmedis are wajib-ul-qatl i.e. those whom a Muslim is duty bound to kill. The fact that the term was never present in the days of Prophet Muhammad pbuh or the four succeeding righteous caliphs aside, the term is accepted by almost all the clerics of Pakistan who rely on jurisprudence of the clergy of medieval age of Islam when religion was abundantly used to crush any dissenting voices against the Ummayad, Abbasid and Ottoman caliphs.

The point?! Point of the matter is that all these clerics like Mufti Muneeb and religo-political leaders like Munawar Hasan, Fazal-ur-Rahman and others firmly believe that Ahmedis should be killed. They are not alone, they are joined in the fray by almost the entire educated middle class of Pakistan who firmly believed until a year back that Taliban are good and their version of shariat will prevail, as Islam will emerge victorious over the West.

They also believe that, tazeers that is man made punishments like killing the apostates and the blasphemer, flogging the alcoholics and the unveiled and stoning the adulterer are necessities without which our faith would be incomplete.

They believe that Taliban are on the right path, in fact many women among this ‘educated’ middle class of ours firmly believe that Taliban’s prohibition of female education was entirely justified. Obviously a major chunk of these women remain in denial and would have us believe that it was all media propaganda and not Taliban but Indian agents destroyed these schools in disguise.

The media, staffed by this exact middle class, sympathizes with Taliban. It is the same media who was madly criticizing the government when it was reluctant in signing the Swat Nizam-e-Adal pact and when it was conducting an operation. But today it was a new low altogether, the shameless display of yellow journalism in their relentless effort to link this event with India, the US and Israel was unbelievable.

Today every deobandi, salafi, ahl-e-hadis and ahl-e-tashee madrassa in Pakistan tells its pupils that Ahmedis are wajib-ul-qatal. Every imam of every mosque believes that Ahmedis are to be killed on sight. Our media refuses to call those killed ‘jaan bahaq’ i.e. lost their lives-the proper Urdu term but prefer to use halaak i.e. died and maaray gaye i.e. got killed for the victims of terrorism. And the biggest media group runs a television show where by the faithful are told to take matters into their own hands unhindered by any threats of suo moto notices.

So my point is, what is the fuss about? Is this not what we belief in? Did we finally realize that the mutant in the mirror is us?

The term crocodile tears is not befitting here because there are no tears, just a lot of noise about whether we should be using the words mosques and sect of Islam for the victims. A lot of complains but not a lot of condemnations, be it media, clerics, politicians or the educated workforce every eye is dry. Pakistan committed murder today!!

Source: Green Goat’s Hide

About the author

Abdul Nishapuri

14 Comments

Click here to post a comment
  • In total agreement
    Look at he headlines on jang & nation websites. Calling them qadiani’s instead of Ahmedi is again their insult.

  • Amjad Cheema : In total agreement Look at he headlines on jang & nation websites. Calling them qadiani’s instead of Ahmedi is again their insult.

    These Political Islamists often forget that even during war following is not allowed:

    “Do not kill the monks in monasteries” or “Do not kill the people who are sitting in places of worship” (Musnad of Ibn Hanbal).

    “Punishment by fire does not behove anyone except the Master of the Fire” (Abu Dawud).

    The prophet (PBUH) is recorded as saying, “Do not kill any old person, any child or any woman” (Abu Dawud).

    1) The Prophet SallAllahu ‘Alaihi wa-sallam said: “March forth in the name of Allah…

    Do not kill an old man, nor a child, nor a woman” [Ref: Sunnan Abu Dawud and Sunnan al-Bayhaqi]

    2) According to the real Mufti – Ibn ‘Abbas – the Prophet would say upon despatching his armies: “March forth in the name of Allah! Fight those who disbelieve in Allah! But do not betray your trusts and covenants, nor should you kill children, nor monks in monasteries.” [Reference: Musnad Ahmad with Hasan chain according to Ahmad Shakir]

    3) According to Handhalah ibn al-Rabi’, the Prophet send a message to Khalid saying: “Do not ever kill children nor labourer” [Reference: Ibn Majah, Abu Dawud, al-Hakim calssified it Sahih and al-Dhahabi agreed.

    4) ‘Umar ibn al-Khattab said: “Fear Allah with regards to the farmers! Do not kill them unless that wage war against you” [Reference: Sunnan al-Bayhaqi and Ibn Abi Shaiba in his Musannaf]

    5) Jabir – may Allah be pleased with him – said about the early Mujahideen, that “they would not kill the Mushrikeen traders”.

    Islamic Code of Conduct in War.

    The media presents many images of innocent women and children who are victims of jihadist suicide bombers. If jihadists use Islam to justify this violence, then Islamic teachings can also be used to discredit these abhorrent acts. In one Quranic verse, Prophet Muhammad comes across a slain woman while riding in battle, and
    he frowns with anger. His attitude prompted a distinct code of conduct among Islamic warriors which includes:

    • No killing of women, children, and innocents―these might include hermits, monks, or other religious leaders who were deemed noncombatants;

    • No wanton killing of livestock and animals;

    • No burning or destruction of trees and orchards; and,

    • No destruction of wells.

    Abu Bakr, the fi rst caliph after Muhammad’s death, formulated a detailed set of rules for Islamic conduct during war. He gave the following instructions to a Muslim army setting out for Syria, which was then governed by the Byzantine Empire: Stop, O people, that I may give you ten rules for your guidance in the battlefi eld. Do not commit treachery or deviate from the right path. You must not mutilate dead bodies. Neither kill a child, nor a woman, nor an aged man. Bring no harm to the trees, nor burn them with fi re, especially those which are fruitful. Slay not any of the enemy’s fl ock, save for your food. You are likely to pass by people who have devoted their lives to monastic services; leave them alone.

  • Amjad Cheema : In total agreement Look at he headlines on jang & nation websites. Calling them qadiani’s instead of Ahmedi is again their insult.

    Shariah Courts should start Proceedings GEO/JANG/THE NEWS INTERNATIONAL for promoting “Bayhayai-Fahashi and Wantonly Shameless Women Newscasters and Women Hosts” through several outlets of GEO/JANG GROUPS. Jang Groups is destroying the Islamic Morals of Pakistan by promoting “Adult Dramas” in Prime Time which cannot be watched with Mothers, Daughters and Sisters. Most of the GEO TV Women Anchors wear and flash their “Extremely Captivating Figures” in Indecent Dresses which is paving the way of perverting young minds and playing havoc with the Hormones of youngsters even Elders are sometime take medicines to cool down Blood Pressure. Mufti Muneeb Ur Rehman and Mufti Naeem of Jamia Binnoria should issue a Fatwa of Banning Women Journalists and Anchorperson from working in any TV Channel particularly GEO. Mixing of Opposite sexes is not allowed in Islam. They should call back their women host [sent in Northern Area to cover Hunza] with a male member. Lets follow Islam in Letter and Spirit.

  • Even the Voice of a Woman is “Pardah” because Awrat means “Hiding” in Arabic. No Male Newscaster should be allowed who doesn’t have Beard and Trimmed Mustaches.

    Women have one Invisible Satan with her and there are two Satans with Clean shave boys. [Zammul Hawa by Ibn Jawzi Translated name “Ishq-e-Majazi Ki Tabahkariyan]

    “Cherub News Casters” should be banned forthwith. Aamir Liaquat lecture Pakistanis on Beard whereas his Owner Mir Shakil ur Rehman [Owner of Geo News] is still Pappu. Ansar Abbasi talks of Beard but his beard is not prescribed as ordered in Shariah rather Ansar Abbasi’s beard is “Rafizi/Jamati Cut” – Nadia Khan Show should be banned and she should be brought in the Shariah Court for her innuendos. Sana Bucha of Crisis Cell should only be allowed to host the show if she is in Hijab. GEO Aag should be banned. list goes on and on.

  • While normally the news of victims’ funeral would be the first or second in headlines, most channels including Geo made an exception today by shoving it down to number five while Aaj did not even bother to give it.

  • No one from the religious groups condemn this ,it means they support Killing of Qadiyanis ,

    I like to ask Ulema ,Mufti and Jamatis ..why thy do not declare clear Fatwa ? If they want Qadiani to be killed then they should start first instead of perching this evil ideology to their supporters ,Mufti Muneeb ,Qazi Hussain ,Munawer Hasan ,Mufi Rafi Usmani ,Ulema of Wafaqul Madaris should start killings of Qadiyani if they think this is a Noble cause instead of using Madaris Talban of this .”Ameer ” should be in the front not on the back …

  • IN ISLAM, IT IS SO THAT THE LIMIT IS ONLY TO BE CALLED “OUT OF ISLAM” not killed, islam never allows to kill any one but islam says that don’t abuse any religion as they will abuse our religion.

  • نہ ڈھونڈو تورا بورا میں
    دھھشدگردی کی جڑ منصورہ میں


    جہاں رہتی ہے ابلیس کی شورا
    وہ ہے منصورہ

  • کیا یہ حبّ رسول ہے؟…نقش خیال…عرفان صدیقی

    میں رات بھر بے کل رہا۔
    اور کیکر کے تیز نوکیلے کانٹے کی طرح پیہم میرے دل میں کچوکے لگانے والی بے کلی کا سبب ایک چھوٹا سا سوال تھا۔ ”کیا اس خبر سے میرے حضور، خاتم الانبیاء، رحمت دو جہاں کی روح پاک کو آسودگی حاصل ہوئی ہوگی؟“ وہ جنہوں نے گالیاں دینے والوں کو دعائیں دیں، وہ جنہوں نے خون کے پیاسوں کو قبائیں عطا کیں، وہ جنہوں نے ستم ڈھانے والوں کو بیت اللہ کی چابیاں بخش دیں، وہ جنہوں نے اپنی راہ میں کانٹے بچھانے اور سر مبارک پر کوڑا کرکٹ پھینکنے والوں کے لئے بھی دست دعا بلند فرمائے، وہ جن کے بارے میں اللہ تعالٰی کا ارشاد ہے کہ ”آپ کو تمام جہانوں کے لئے رحمت بنا کر بھیجا گیا ہے“۔ جب ہوا کے کسی لطیف جھونکے نے روضہ رسول کی سبز جالیوں سے پرے نئی کریم کو یہ خبر دی ہوگی تو آپ کی روح پاک بے کل نہ ہوئی ہوگی؟
    لاہور میں دہشت گردی کا نشانہ بننے والے کون تھے؟ ان کا مذہب، عقیدہ اور مسلک کیا تھا؟ یہ سوالات غیر متعلقہ ہیں۔ وہ انسان تھے اور ہمارے دین کا درس ہے کہ ”ایک انسان کا قتل پوری انسانیت کا قتل ہے“۔ ہمارے نبی پاک کا فرمان ہے کہ ”جس نے کسی ذمی (اسلامی ریاست کے غیرمسلم شہری) کو قتل کیا، وہ جنت کی خوشبو نہیں سونگھ سکے گا حالانکہ اس کی خوشبو چالیس سال کی مسافت کے فاصلے سے آتی ہوگی“۔ کیا اس نبی کریم کا کلمہ پڑھنے اور ان سے محبت و عقیدت کا دعویٰ کرنے والا کوئی شخص نبی کے اس فرمان کی خلاف ورزی کا تصور بھی کرسکتا ہے؟
    مجھے آج پھر طائف یاد آرہا ہے۔ وہ چھوٹا سا ویرانہ میری آنکھوں کے سامنے ہے جہاں کبھی انگوروں کا باغ تھا۔ میری نظریں سیاہ رنگ پتھروں سے اٹے پہاڑ کے دامن میں ایک قدیم شکستہ سی مسجد پہ جمی ہیں۔ کہا جاتا ہے یہی وہ مقام ہے جہاں طائف کے اوباشوں کے پتھروں سے زخم خوردہ نبی نے کچھ دیر آرام کیا تھا۔ زید بن حارثہ آپ کو سہارا دئیے ہوئے تھے۔ یہی وہ لمحہ تھا جب اللہ تعالٰی کے جلال نے انگڑائی لی۔ جبریل پیغام لے کے آئے کہ پہاڑوں کا نگران فرشتہ تیار کھڑا ہے۔ آپ حکم فرمائیے کہ اس بستی کو اپنے نابکار مکینوں سمیت دو پہاڑوں کے درمیان پیس کر سرمہ کردیا جائے۔ میرے حضور نے دکھ، درد اور اذیت کی اس کیفیت میں بھی فرمایا۔ ”نہیں! ممکن ہے ان کی اولاد ایمان لے آئے“۔ مجھے مکہ کی فتح کا دن یاد آیا۔ وہ کون سا ستم ہے جو اہل قریش نے روا نہ رکھا تھا۔ لیکن سپاہ فتح مند شہر کی دہلیز پہ قدم رکھتی ہے تو میرسپاہ نے خزاں رسیدہ پتوں کی طرح کانپتے دشمنوں سے کہا۔ ”آج کے دن تم پر کوئی ملامت نہیں۔ جاؤ تم سب آزاد ہو“۔ یہ وہ لوگ تھے جنہوں نے حضور پہ بہتان باندھے۔ آپ کو شہید کرنے کے منصوبے بنائے۔ آپ کے صحابہ کو صحرا کی دہکتی ریت پہ لٹا کر سینے پر بھاری پتھر رکھ دئیے، ہاتھوں اور پاؤں میں میخیں ٹھونک دیں، تین برس تک شعب ابی طالب کے سنگلاخ پہاڑوں کی طرف دھکیل دیا، آپ کو ہجرت پہ مجبور کردیا، آپ کو مدینہ میں بھی چین سے نہ رہنے دیا۔ لیکن وہی لوگ سرنگوں ہوئے تو رحمت کی ایک گھٹا مکہ پہ چھا گئی۔ بہت سے صحابہ کی بے نیام تلواریں دشمنان اسلام کا لہو پینے کے لئے مچل رہی تھیں۔ حضرت سعد بن عبادہ نے حضور سے کہا۔ ”رسول اللہ! آج تو انتقام، جنگ و جدال اور خون خرابے کا دن ہے آج کعبے کو حلال کیا جائے گا“۔ نبی کریم نے فرمایا۔ ”نہیں سعد۔ تم نے غلط کہا۔ آج تو وہ دن ہے جس میں کعبہ کی تعظیم کی جائے گی۔ جب کعبہ کو غلاف پہنایا جائے گا۔ آج تو رحمت اور امن کی برکھا کا دن ہے“۔
    ہبار، کو حضور کے سامنے لایا گیا۔ حضور کی صاحبزادی حضرت زینب مکہ سے مدینہ جارہی تھی کہ ہبار نے ان پر شدید سنگ زنی کی۔ آپ حاملہ تھیں۔ چوٹیں اتنی شدید تھیں کہ حضرت زینب مدینہ پہنچ کر انتقال کر گئیں۔ اپنی پیاری بیٹی کی یاد سے حضور کی آنکھیں بھر آئیں۔ نگاہ اٹھا کر ہبار کی طرف دیکھا اور فرمایا۔ ”میں نے معاف کردیا۔ اسے چھوڑ دو“۔ وحشی کو آپکی خدمت میں پیش کیا گیا۔ اس شخص نے جنگ احد میں حضور کے چچا حضرت حمزہ کا گلا کاٹا تھا۔ حضور اکثر اپنے چچا کے قتل اور وحشی کی وحشت کا ذکر کیا کرتے۔ آج وہ وحشی آپ کے سامنے کھڑا تھا اور اس پر لرزہ طاری تھا۔ آپ نے اسکی جان بھی بخش دی عظیم چچا کی یاد آئی تو اتنا فرمابا ”اسے مجھ سے دور لے جاؤ“۔ حضرت حمزہ کا پیٹ چاک کرکے آپ کا کلیجہ چبانے والی درندہ صفت عورت، ہند کو پیش کیا گیا۔ خوف اور ندامت کے باعث اس نے اپنا منہ نقاب سے چھپا لیا۔ آپ نے فرمایا۔ ”جاؤ تمہیں معاف کردیا“۔
    میں رات بھر بے کل رہا۔ اس وقت بھی ایک چھوٹے سے سوال کی چبھن سے ٹیسیں اٹھ رہی ہیں۔ کیا لاہور میں اسی سے زائد انسانوں کی ہلاکت کی خبر سبز جالیوں والی خلوت گاہ کے مکین کے لئے آسودگی کا باعث بنی ہوگی؟ یہ کون تھے جنہوں نے خون کی ہولی کھیلی؟ وہ جو کوئی بھی تھے خاتم النبیین کے اسوہ حسنہ اور تعلیمات کریم سے بے گانہ تھے۔ آپ نے تو جانوروں تک کو اذیت دینے سے منع فرمایا ہے۔ جنگ کے دوران بھی بلاوجہ درخت کاٹنے اور کھیت اجاڑنے سے روکا ہے۔ آپ نے تو میثاق مدینہ کے ذریعے غیرمسلموں کے ساتھ مل جل کر رہنے کے آداب بتائے ہیں۔ آپ نے تو خطبہ حجتہ الوداع میں انسانی تہذیب و معاشرت کا پہلا جامع منشور عطا کیا ہے۔ آپ کا کوئی نام لیوا ایسی خونخواری کا تصور بھی کیوں کر کرسکتا ہے؟
    اللہ کا فرمان ہے۔ ”دین میں کوئی جبر نہیں“۔ سورہ یونس میں ارشاد ہوتا ہے۔ ”اگر آپ کا رب چاہتا تو جو لوگ زمین میں ہیں، سب کے سب ایمان لے آتے۔ تو پھر کیا آپ لوگوں کو مجبور کریں گے حتٰی کہ وہ مومن ہوجائیں“۔ کس قدر واضح بات ہے کہ اگر ہر شے پہ قدرت رکھنے والے قادر مطلق نے بھی دین مذہب کے معاملے میں اپنی قدرت اور قوت کو استعمال نہیں کیا اور یہ تلقین بھی فرمائی کہ کسی کو جبر و اکراہ کے ذریعے مسلمان یا مومن نہیں بنایا جاسکتا تو پھر ہم میں سے کسی کو یہ حق کیسے حاصل ہوگیا کہ وہ بزور دوسروں پہ اسلام نافذ کرنے لگے اور کسی دوسرے مذہب و مسلک کی پیروی کے جرم میں ان کا خون بہاتا پھرے۔ قرآن تو یہاں تک کہتا ہے کہ ”مشرکین اللہ کو چھوڑ کر جن جھوٹے خداؤں کو پکارتے ہیں تم انہیں بھی برا نہ کہو“۔ سورہ الکافرون میں کیا اصول طے کردیا گیا۔ ”تمہارے لئے تمہارا دین اور میرے لئے میرا دین“۔
    امیر المومنین حضرت عثمان کے خلاف بلوائیوں نے انتہائی بد تہذیبی اور بے ہودگی اختیار کی۔ یہاں تک کہ آپ کو شہید کرنے کے درپے ہوئے۔ حضرت ابوہریرہ نے ان فتنہ گروں سے دو دو ہاتھ کرنے کی اجازت چاہی۔ امیر المومنین نے کہا۔ ”اے ابوہریرہ! کیا تمہیں پسند ہے کہ تم سب کو میرے سمیت قتل کردو“۔
    ابوہریرہ نے جواب دیا۔ ”نہیں امیر المومنین“۔
    حضرت عثمان نے فرمایا۔ ”بلاشبہ اگر تو نے ایک آدمی کو قتل کردیا تو گویا تم نے تمام لوگوں کو قتل کر ڈالا“۔
    مذہب، مسلک، عقیدے اور نظریے سے قطع نظر، کسی انسان کے قتل کی اتنی سخت وعید کے باوجود یہ کون ہیں جو جیتے جاگتے انسانوں پر بارود برساتے اور انہیں گولیوں سے بھون ڈالتے ہیں؟ کیا یہ بھول چکے ہیں کہ ایک دن انہیں اللہ کے حضور پیش ہونا اور اپنے ہر عمل کا حساب دینا ہے؟ کیا انہیں نبی رحمت کا یہ فرمان بھی یاد نہیں کہ قیامت کے دن سب سے پہلے خون کے مقدمے پیش ہوں گے اور رب کائنات فیصلے صادر کرے گا۔
    اللہ انہیں ہدایت دے جو ایسی خونخواری کو حب رسول اور عشق نبی کی کوئی ادا سمجھتے ہیں۔ ایسی فتنہ گری کی تخم ریزی کرنے والوں کو سوچنا چاہئے کہ جب ہوا کے کسی لطیف جھونکے نے سبز جالیوں سے پرے حجرہ نور کے مکین کو یہ خبر دی ہوگی تو ان پر کیا گزری ہوگی؟

    Irfan Siddiqui, Jang, 30 May 2010
    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=437353

  • بنیادی انسانی حقوق! …فرح ناز اصفہانی

    کسی معاشرے کی اخلاقی اور نفسیاتی طاقت اس معاشرے میں انسانی حقوق کی سطح سے ناپی جاتی ہے۔ یہ کہنا مبالغہ نہ ہوگا کہ کسی معاشرے میں انسانی حقوق کا احترام وہ بنیاد ہے جس پر انسانی معاشرے تعمیر کئے جاتے ہیں۔ اسی سے کسی معاشرے میں امن،ہم آہنگی، سکون اور ترقی جنم لیتے ہیں اور دوسرے معاشروں کے ساتھ پرامن طور پر رہنے کی راہیں ہموار ہوتی ہیں ۔ انسانی حقوق کا تصور دنیا کے ہر مذہب کے لازمی اجزا میں شامل ہے۔ اس لئے اقوام متحدہ نے انسانی حقوق کے چارٹر کے ذریعے اس پہلو پر اتنا زور دیا ہے۔ کسی ملک میں انسانی حقوق کی خراب صورت حال اس کے دیوالیہ پن پر دلالت کرتی ہے۔ اسلام رنگ و نسل کے کسی امتیاز کے بغیر انسانی وقار اور انسانی حقوق کا سب سے بڑا علمبردار ہے۔ بانی پاکستان نے بھی اقلیتوں سمیت تمام شہریوں کیلئے مساوی انسانی حقوق کی بات کی۔ 73ء کا آئین بھی انسانی حقوق کے تحفظ کی یقین دہانی کراتا ہے۔ لیکن بدقسمتی سے پاکستان میں انسانی حقوق کی صورت حال ایسی نہیں ہے جیسی ہونی چاہئے، خاص طور پر عورتوں کو امتیازی سلوک کا سامنا رہتا ہے۔انہیں ہراساں کیا جاتا ہے۔ بعض اوقات مذہبی روایات کو ٹھیک طور پر نہ سمجھنے کی بناء پر تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ غیرت کے نام پر قتل، گھریلو تشدد، شادی کے معاملے میں جبر، درشت زبان کا استعمال، مارپیٹ اور جبری مباشرت اس کے شاخسانے ہیں۔ بعض صورتوں میں انہیں آگ لگا دینا، ان پر تیزاب پھینک دینا اور ان کی اسمگلنگ وغیرہ ہمارے معاشرتی رویوں پر سیاہ دھبوں کی حیثیت رکھتے ہیں۔ چند سال قبل مختاراں مائی کے ساتھ اجتماعی زیادتی اورحالیہ دنوں میں نتاشا نامی لڑکی کے ساتھ پولیس والوں کی تھانہ کے اندر زیادتی بلاشبہ ہمارے لئے شرم کا باعث ہیں۔
    اسی طرح اقلیتوں کے ساتھ عدم برداشت کا رویہ بھی، جس کی ایک بدترین مثال گوجرہ کا واقعے ہے۔ یہ مذہبی شدت پسندی جنرل ضیاء کے دور میں بنائے گئے بعض امتیازی قوانین کا نتیجہ ہے جن کی ایک مثال حدود آرڈیننس اور توہین رسالت کا قانون ہے۔ ان دونوں قوانین کو مذہبی انتہا پسندوں کی طرف سے اقلیتوں اور عورتوں کے خلاف غلط طور پر استعمال میں لایا گیا ہے۔ اگرچہ ڈکٹیٹر ضیاء مدت ہوئی منظرسے جاچکااور معاشرے میں مذکورہ قوانین کے خلاف جو اسلام اور پاکستان کیلئے بدنامی کا باعث بن رہے ہیں مضبوط عمومی رائے بھی نہیں رہی ہے، ملک اس کے باوجود اب بھی اس آمرانہ ورثے کے سائے معاشرے پر منڈلا رہے ہیں۔ انسانی حقوق کی موجودہ صورت حال ملک میں گورننس کے نظام کی خامیوں کو ظاہر کرتی ہے۔ ایسے غیرانسانی رویوں اور جرائم کے بارے میں معاشرے کی بے حسی اور لاتعلقی اس بات کا تقاضا کرتی ہے کہ اس بارے میں لوگوں کے اندر آگاہی بڑھائی جائے، موجودہ قوانین میں ضروری تبدیلیاں لائی جائیں اور متعلقہ جرائم کے خاتمے کیلئے ضروری قانون سازی کی جائے۔ ایسا کرنے کے لئے حکومت کو بھی غیرمتزلزل سیاسی عزم کی ضرورت ہوگی اور معاشرے کی سطح پر بھی اس کی بھرپور تائید کی ضرورت ہوگی۔
    تاہم یہ حقیقت باعث اطمینان ہے کہ پیپلزپارٹی کی موجودہ حکومت اس بارے میں اپنی ذمہ داریوں سے پوری طرح آگاہ ہے اور وہ ایک ایسے معاشرے کی تشکیل کیلئے پوری طرح تیار ہے جہاں عورت مرد کے مابین مساوات ہو اور برابری کے حقوق سے مستفید ہونے کے مواقع ہر قسم کے شک و شبہ سے پاک ہوں۔ صدر آصف زرداری نے یکم جولائی 2008ء کو ایتھنز میں سوشلسٹ انٹرنیشنل سے اپنے خطاب میں اس حوالے سے اپنے عزم کو ان الفاظ میں بیان کیا تھا۔ ”ہم ایک ایسے پاکستان کا خواب دیکھ رہے ہیں جہاں عورت اور مرد ہر لحاظ سے برابر ہوں، جیسا کہ انہیں قرآن کے ذریعے ضمانت دی گئی ہے۔ ایک نیا پاکستان جہاں ایک لڑکی کی پیدائش پر بھی ویسی ہی خوشی اور امید کا اظہار کیا جائے جیسا کہ لڑکے کی پیدائش پر کیا جاتا ہے۔ ایسا ہے وہ پاکستان جس کے لئے بینظیر نے جان دی۔ اور ایسا ہے وہ پاکستان جس کے لئے ہم زندہ رہیں گے“۔ یہ محض خالی خولی الفاظ نہیں۔ حکومت نے گھریلو تشدد روکنے کے قانون اور ہراساں کرنے سے بچانے کے قانون کے ذریعے انہیں حقیقت میں بدل دیا ہے۔ یہ پہلا موقع ہے کہ کسی حکومت نے گھریلو تشدد کے معاملے کو سرکاری دائرہ کار میں لانے کا عزم کیا ہے اور اسے قابل سزا جرم قرار دے دیا ہے۔ بعنیہ اس طرح ملازمت اور کام کاج کی جگہوں پر عورتوں کو ہراساں کئے جانے سے تحفظ دینا ایک دیرینہ مسئلے کا ایک مزید اعتراف اور اسے فوری ختم کرنے کے عزم کا اظہار ہے۔ ان اقدامات کا خواتین کے حقوق کے سرگرم داعیوں، ارکان پارلیمنٹ اور سول سوسائٹی کی تنظیموں نے بڑے پیمانے پر خیرمقدم کیا ہے۔ پیپلزپارٹی اس بات پر بھی تعریف کی مستحق ہے کہ اس نے مشرف حکومت میں حدود آرڈیننس کے خاتمے میں اہم کردار ادا کیا۔ پارٹی نے عورتوں کے بل پر ووٹ دے کر ایک تاریخ رقم کی جبکہ دیگر تمام نے اس کے خلاف ووٹ دیا، اور سرکاری بنچوں کے 44 ووٹ غیرحاضر رہے۔
    سرکاری شعبے میں عورتوں کیلئے گنجائش پیدا کرنے کے لئے حکومت نے تمام وفاقی ملازمتوں بشمول مرکزی اعلیٰ ملازمتوں (CSS) کے خواتین کا کوٹہ پانچ فی صد سے بڑھا کر دس فی صد کردیا ہے۔ پیپلزپارٹی عورت کو بااختیار اور صنفی مساوات عطا کرنے کے مضبوط استناد کی حامل ہے۔ یہ پیپلزپارٹی ہی تھی جس نے اپنا ذاتی کاروبار شروع کرنے کی خواہشمند عورتوں کو قرضے اور مالیاتی سہولتیں فراہم کرنے کیلئے فرسٹ ویمن بینک قائم کیا۔ حکومت نے سرکاری شعبے میں 133,000 ہزار ہیلتھ ورکروں کا دیہات اور شہر وں میں تقرر کیا ہے۔
    جہاں تک اس بات کا تعلق ہے کہ پاکستان پیپلزپارٹی انسانی حقوق کو کتنی اہمیت دیتی ہے تو اس کے ثبوت میں محترمہ بینظیر بھٹو شہید کے دور حکومت میں انسانی حقوق کی وزارت کی کارکردگی پیش کی جاسکتی ہے۔ اس کے علاوہ بینظیر بھٹو کا حکومت کا اقوام متحدہ کے کنونشن سے وہ خطاب ہے جس میں انہوں نے خواتین کے ساتھ کسی بھی قسم کا امتیازی سلوک نہ کرنے پر زور دیا تھا۔ اس کے باوجود کہ بعض طاقتیں اس موقف کے خلاف تھیں۔ موجودہ حکومت بھی اقلیتوں کے تحفظ کے باب میں ایک بل پیش کرنے کا ارادہ رکھتی ہے تاکہ اقلیتوں کے ان سیاسی، معاشی اور معاشرتی مفادات کا تحفظ کیا جاسکے جو 1973ء کے آئین میں انہیں دئیے گئے ہیں۔ اور ان اقلیتوں کے رشتہ ازدواج سے متعلق قوانین پر بھی کام کیا جارہا ہے تاکہ ان کو تمام رسمیں اپنے مذہب کے مطابق انجام دینے کا موقع مل سکے۔ حکومت نے وفاقی سطح پر ملازمتوں میں اقلیتوں کا 5فی صد کوٹہ بھی منظور کیا ہے۔ پیپلزپارٹی کی حکومت نے 11/اگست کو ”اقلیتوں کا دن“ بنانے کا بھی اعلان کیا ہے اور یہ ایک اتفاق ہے کہ 11/اگست 1947ء کو قائد اعظم نے اقلیتوں کے پاکستان میں حیثیت اور حقوق کے بارے میں تاریخی خطاب کیا تھا۔ کرسمس کے موقع پر قصور میں جو دہشت گردی کا واقعہ ہوا تھا۔ موجودہ حکومت نے فوری طور پر اس کی طرف توجہ کی اور متاثرین کو مالی امداد فراہم کی ان کی آبادکاری کے انتظامات کئے اور جو شرپسند عناصر اس واقعے میں ملوث تھے ان کے خلاف قانونی کارروائی بھی کی گئی۔ اس باب میں بہت کچھ کام کیا گیا ہے مگر اب بھی بہت کچھ کرنا باقی ہے۔ مگر اس باب میں قانون سازی کرنا ایک بہت ہی اہم کام ہے مگر دیکھنا یہ ہے کہ یہ قوانین کب حقیقت کا روپ اختیار کرتے ہیں۔ مگر زیادہ ضروری یہ ہے کہ ہم اپنے معاشرے کو کس طرح مزید انتشار سے بچاتے ہیں اور اس کو صحیح راہ پر گامزن کرتے ہیں۔ہمارے معاشرے کو ان کوششوں میں حکومت کی مدد کرنی چاہئے اور ان افراد کی حوصلہ شکنی کرنی چاہئے جو ہمارے مذہب کے غلط مطلب نکال رہے ہیں اور ناپسندیدہ کارروائیوں میں مصروف ہیں۔ حکومت نے غیرسرکاری تنظیموں اور دیگر اداروں کا تعان بھی حاصل کرلیا ہے تاکہ ملک میں انسانی حقوق کی پامالی کا تدارک کیا جاسکے۔میڈیا بھی اس سلسلے میں اہم کردار ادا کرسکتا ہے تاکہ ہماری قوم کو دنیا میں احترام سے دیکھا جاسکے اسلئے کہ میڈیا نے جرائم کی نشاندہی کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے لیکن حکومت کو اس باب میں حکومت کو ہی سب سے زیادہ اہم کردار ادا کرنا ہوگا۔ ہمارے معاشرے اور میڈیا نے عوام میں احساس اور شعور اجاگر کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=437361